بچوں کے سیکھنے اور آپس میں بانٹنے کے لئے صحت کے 100 عدد پیغامات صحت کی تعلیم کے عام اور معتبر پیغامات ہیں جن کا ہدف 8-14 سال کے بچے ہیں۔. لہذا اس میں10-14 سال تک کے نو عمر جوان شامل ہیں۔ ہم محسوس کرتے ہیں کہ یہ بات خاص طور پرمفید اور اہمیت کی حامل ہے کہ 10-14 سال کی عمر کے نو عمر جوانوں کو باخبر رکھے جانے کی یقین دہانی کی جاۓ کیونکہ اس عمر کا طبقہ اکثر و بیشتر اپنے اہلِ خانہ میں چھوٹے بچوں کی دیکھ بھال کر رہا ہوتا ہے. . اس کے علاوہ، اس طرح سے اپنے اہلِ خانہ کی مدد کرنے کیلئے جو کام وہ سر انجام دے رہے ہیں اس کو سراہنا اور اس سے آگاہی حاصل کرنا بہت اہم ہے۔

یہ100 پیغامات ان 10 میسجز پر مشتمل ہیں جن میں سے ہر ایک صحت کے 10 کلیدی موضوعات کا حامل ہے: ملیریا، اسہال، غذائیت، کھانسی سردی اور بیماری، آنتوں کے طفیلی کیڑے، پانی و صفائی، حفاظتی ٹیکے، ایچ آئی وی(HIV) اور ایڈز اورحادثات، زخم اور ابتدائی ایام کی نشوونما. صحت کے عام پیغامات والدین اور صحت کے ماہرین کے لئے بچوں کے ساتھ گھرمیں، اسکولوں میں، کلبوں اور کلینکس میں استعمال کرنے کے لئے ہیں.

موضوع نمبر 3 میں شامل 10 پیغامات یہ ہیں: حفاظتی ٹیکے

  1. دنیا بھر میں لاکھوں والدین ہر سال اس بات کو یقینی بناتے ہیں کہ ان کے بچوں کی بڑھوتری مضبوط ہو اور انہیں بیماریوں سے بچاؤ کے لیے حٖفاظتی ٹیکوں کے لیے لے کر جاتے ہیں۔

  2. جب آپ متعدی بیماری میں مبتلا ہوں، تو ایک چھوٹا سا، پوشیدہ جراثیم آپ کے جسم میں داخل ہو چکا ہوتا ہے. یہ جراثیم مزید جراثیم بناتا ہے اور آپ کے جسم کو بھرپور طریقے سے کام کرنے سے روکتا ہے.
  3. آپ کے جسم میں خصوصی سپاہی جیساکہ محافظین جو کہ اینٹی باڈیز کہلاتے ہیں ان جراثیم سے لڑتے ہیں۔ جب جراثیم مرجاتے ہیں، تو اینٹی باڈیزدوبارہ سے لڑنے کے لئے تیارہوجاتی ہیں۔
  4. حفاظتی ٹیکے آپ کے جسم میں انٹیجنزڈال دیتے ہیں (انجکشن یا منہ کے ذریعے). یہ آپ کے جسم کو ایک سپاہی کی مانند بنا دیتے ہیں جیسا کہ اینٹی باڈیز ایک بیماری سے لڑتی ہیں ۔
  5. کچھ حفاظتی ٹیکے ایک سے زیادہ مرتبہ دیے جاتے ہیں تاکہ یہ آپکے جسم کو بیماری سے بچاؤ کے لیے ضرورت کے مطابق اینٹی باڈیز بنانے میں مدد دے۔
  6. خوفناک بیماریوں جو موت اور تکلیف کا باعث بنتی ہیں، جیسا کہ خسرہ، تپِ دق، کالی کھانسی،خناق، پولیو اور ٹیٹنس (اورمزید!) ان کو حفاظتی ٹیکوں سے بچایا جاسکتا ہے.
  7. اپنے جسم کے بچاؤ کے لیے آپ کو بیماری کے حملے سے پہلے حفاظت کی ضرورت ہو گی۔
  8. بچوں کو فوری طور پر بچانے کے لیے حفاظتی ٹیکے چھوٹے بچوں کو اسی وقت دے دیے جاتے ہیں۔ اگر ایک بچہ اپنے موقع سے محروم رہ جاتا ہے تو اسے بعد میں حفاظتی ٹیکے دے دیے جاتے ہیں۔
  9. مختلف بیماریوں سے بچاؤ کے لئے بچوں کو مختلف اوقات میں مختلف حفاظتی ٹیکے دیے جا سکتے ہیں۔ معلوم کیجیے کہ آپ کی کمیونٹی کب اور کہاں حفاظتی ٹیکے لگواتی ہے۔
  10. اگرچھوٹے بچے یا نوجوان بچے حفاظتی ٹیکوں کے دن تھوڑے بہت بیمار ہوں توپھر انھیں بعد میں بھی ٹیکے لگوائیں جا سکتے ہیں۔

صحت کے ان پیغامات کاصحت کے ماہر معلمین اور طبی ماہرین کی طرف سے جائزہ لیا گیا ہے اور یہ ORB ہیلتھ ویب سائٹ پر بھی دستیاب ہیں: www.health-orb.org.

بچوں کی سرگرمیوں کے بارے یہ کچھ تجاویز ہیں کہ جن سے بچوں کے لئے اس موضوع کو بہتر طور پر سمجھنے اور ان پیغامات کو دوسروں کے ساتھ بانٹنے میں مدد مل سکتی ہے۔

حفاظتی ٹیکے: بچے کیا کر سکتے ہیں؟

  • اپنی خود کی زبان میں اپنے الفاظ کا استعمال کرتے ہوۓ حفاظتی ٹیکوں کے بارے میں پیغامات تیار کریں!

  • پیغامات کو یاد کرلیں تاکہ ہم کبھی بھی انہیں نہ بھولیں!
  • پیغامات کو دوسرے بچوں اور اپنے اہلِ خانہ کے ساتھ بانٹیں!
  • حفاظتی ٹیکو ں کے دنوں کے لئے پوسٹر بنائیں اور انہیں وہاں لگائیں کہ جہاں ان کو ہر ایک دیکھ سکتا ہو۔
  • ایک کھیل بنائیں جو ہمارے گاؤں میں بچوں کوجان لیوا بیماریوں کے نقصانات سے بچاؤ پر مبنی ہو۔
  • ایک کہانی بنائیں جوسپر ہیرو کی حفاظتی تصاویرپرمبنی ہو جو کہ ہمیں ایک جان لیوا بیماری سے بچانے کے لیے لڑ رہا ہو۔
  • ایک پوسٹربنائیں جو کہ ایک یا ایک سے زیادہ بیماریوں جن سے حفاظتی ٹیکوں کی مددسے بچا جاسکتا ہے جیسا کہ خناق، خسرہ اور روبیلا، Pertussis، کالی کھانسی، تشنج اور پولیو
  • ایک کھیل یا اس کے بارے میں کہانی بنائیں اینٹی باڈی، ایک قسم کا، مضبوط محافظ ہے جو ہمیں محفوظ اور صحت مند رکھتا ہے.
  • ہر بیماری کے بارے میں سیکھیں اورجو کچھ آپ نے دوسرے بچوں یا اپنے خاندانوں سے سیکھا ہے اس کو بانٹیں۔
  • ایک خاص سالگرہ کا کارڈبنائیں حفاظتی ٹیکوں کے اوقات کے مطابق ایک نئے بچے اوراس کی ماں کے لئےنیک خواہشات کے ساتھ کہ وہ زندگی کا پہلا سال خوش اور صحت مند گزاریں!
  • بیماریوں کے بارے میں مزید جانیں جن کے خلاف حفاظتی ٹیکے ہماری حفاظت کرتے ہیں.
  • معذوربچوں کی مدد کرنے کے بارے میں مزید معلومات حاصل کیجیے.
  • ایک کوئز بنائیں اورسوالات کیجیے یہ جاننے کے لیے کہ ہم کتنا حفاطتی ٹیکوں کے بارے میں جانتے ہیں۔ دوستوں اور خاندان کے ساتھ بھی بانٹیں۔
  • یہ معلوم کیجیے کہ کون سے حفاظتی ٹیکوں کی ہمیں ایک سے زیادہ دفعہ ضرورت ہیں۔ اوران بچوں کو تلاش کرنے میں مدد کیجیے جن کو حفاظتی ٹیکے یاد نہیں رہے۔
  • یہ معلوم کیجیے کہ بیماریوں کی سپرقوت کیا ہے اور حفاظتی ٹیکے کس طرح ان قوتوں کو شکست دیتے ہیں۔
  • اپنی کلاس میں ہرایک طالبِ علم اوراساتذہ کو چیک کیجیے کہ ان سب نے حفاظتی ٹیکے لگوائیں ہیں۔
  • یہ معلوم کیجیے کہ اگرحفاظتی ٹیکوں کی خاص تقریبات منائی جاتی ہیں یا دن اور صحت کے ہفتے ہیں کہ جب تمام بچے اور چھوٹے بچے حفاطتی ٹیکوں کے لیے جا سکیں۔
  • یہ معلوم کیجیے کہ اگر میرے خاندان میں سے کوئی حفاظتی ٹیکوں سے محروم رہ گیا ہے تو ان کو تلاش کیا جا سکے۔
  • اپنے ملک میں حفاظتی ٹیکوں کے بارے میں پوچھیں اور ہم کب حفاظتی ٹیکے لگوا سکتے ہیں۔
  • یہ معلوم کیجیے اگر ہمارے خاندان میں کوئی جان لیوا بیماری میں مبتلا تھا اور مزید جانیں کہ ان کا کیا حال ہے۔

مزید معلومات کے لئے برائے مہربانی www.childrenforhealth.org یا clare@childrenforhealth.org سے رابطہ کریں

اُردُو‎ Home